Select Page

مالا کنڈ

1970ء

سے قبل چترال، دیر اور سوات کی خود مختار ریاستوں اور مالاکنڈ کے قلعہ کے اردگرد کے علاقوں (مالاکنڈ بندوبستی علاقہ) کو مالاکنڈ ایجنسی کہا جاتا تھا۔ تاہم مالا کنڈ ایجنسی صوبے کے زیر انتظام قبائل علاقہ جات (پاٹا) میں شامل تھی۔ 1970ء میں دیر، سوات اور چترال کو ملاکر مالاکنڈ ڈویژن بنادیا گیا تھا۔ 2000ء میں مقامی حکومتوں کے نئے نظام کے متعارف ہونے کے بعد مالا کنڈ ڈویژن ختم ہونے کی بعد مالا کنڈ بندوبستی علاقے کو ضلع بنادیا گیا۔ عظیم گندھارا تہذیب کے امین اس علاقے کو کئی حملہ آوروں نے اپنے گھوڑوں کے سموں تلے روندا۔ سابق برطانوی وزیراعظم سرونسٹن چرچل نے بھی فوج کے کیپٹن کی حیثیت سے یہاں خدمات سر انجام دیں۔ اس کے شمال میں دیر، شمال مشرق میں سوات اور بونیر، جنوب مشرق میں مردان، جنوب میں چار سدہ کے اضلاع واقع ہیں۔ ضلع مالا کنڈ کے مغرب اور جنوب مغرب میں باجوڑ اور مہمند کے قبائلی علاقے ہیں۔ زرخیز اور گھنے جنگلات سے ڈھکے پہاڑوں کے دامن میں واقع مالاکنڈ کو دریائے سوات سیراب کرتا ہے۔

 

https://www.youtube.com/watch?v=OUnyDfbp42A